اسلام کی خاتون اول – ام المومنین حضرت خدیجہؓ

جمعہ, 17 جون 2016 06:40

عالی نسب خاتون جن کا تعلق عرب کے قبیلے قریش سے تھا۔ جو حسن صورت و سیرت کے لحاظ سے “طاہرہ” کے لقب سے مشہور تھیں۔ انھوں نے حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو تجارتی کاروبار میں شریک کیا اور کئی مرتبہ اپنا سامانِ تجارت دے کر بیرون ملک بھیجا۔ وہ آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی تاجرانہ حکمت، دیانت، صداقت، محنت اور اعلی اخلاق سے اتنی متاثر ہوئیں کہ آپ نے حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو شادی کا پیغام بھجوایا۔ جس کو حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے اپنے بڑوں کے مشورے سے قبول فرمایا۔

حضرت خدیجہؓ نے سب سے پہلے اسلام قبول کیا اورام المومنین ہونے کی سعادت حاصل کی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ساری کی ساری اولاد حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالٰی عنہا سے پیدا ہوئی اورصرف ابراہیم جوکہ ماریہ قبطیہ رضی اللہ تعالٰی عنہا سے تھے جوکہ اسکندریہ کے بادشاہ اورقبطیوں کےبڑے کی طرف سے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کوبطورہدیہ پیش کی گئی تھیں۔

رسول اللہ کے نزدیک ام المومنین خدیجہؓ کی منزلت

حضرت خدیجہؓ نے رسول اللہ ﷺ کے ساتھ مشترکہ زندگی میں بہت اہم کردار ادا کیا ہے اورآپﷺ کی سیرت طیبہ میں سیدہ خدیجہؓ کو ایک خاص مقام و منزلت حاصل ہے۔ رسول اللہﷺ نزدیک آپ کے مقام و مرتبے کے بارے میں متعدد روایات نقل ہوئی ہیں؛ یہاں تک کہ آپﷺ سیدہؓ کی وفات کے کئی برس بعد بھی آپ حضرت خدیجہؓ کو یاد کرکے آپ کے بے مثل ہونے پر زور دیا کرتے تھے؛ اور جب رسول اللہ(ص) سے کہا گیا کہ ’’خدیجہ(س) آپ کے لئے ایک سن رسیدہ بیوی سے زیادہ کچھ نہ تھیں!‘‘ تو آپ بہت ناراض ہوئے اور اس کی بات کو ردّ کرکے اشارہ فرمایا کہ “خداوند متعال نے مجھے کبھی بھی ایسی زوجہ عطا نہیں کی جو خدیجہؓ کا نعم البدل بن سکے؛ کیونکہ انھوں نے میری تصدیق کی جبکہ کسی اور نے میری تصدیق نہیں کی؛ انھوں نے میری مدد کی ایسے حال میں جبکہ کسی اور نے میری مدد نہیں کی؛ اپنے مال سے میری امداد کی جبکہ دوسروں نے اپنا مال مجھے دینے سے انکاری تھے۔

حضرت خدیجہؓ، رسول اللہﷺ کی زوجیت میں آنے کے بعد آپﷺ کے لئے بہترین زوجہ تھیں، آپ نے صداقت و عشق کے ساتھ شوہر کے عنوان سے آپﷺ کا حق ادا کیا اور وہ سکون آپﷺ کے لئے فراہم کیا جس کی خواہش مشترکہ زندگی میں ہرمیاں بیوی کو تلاش ہوتی ہے اور یہ سب کرتے ہوئے خدیجہؓ کے سامنے اللہ کی رضا و خوشنودی کے سوا کوئی بھی دوسرا مقصد نہ تھا۔

چنانچہ رسول اللہﷺ نے حضرت خدیجہؓ کی حیات کے دوران دوسری شادی نہیں کی اورجو توصیفات حضور اکرمﷺ نے آپ کی شان میں بیان کی ہیں، ان سے آپﷺ کے نزدیک خدیجہؓ کے اعلیٰ مقام ومنزلت کا اظہارہوتا ہے۔ شاید سیدہ خدیجہؓ کی شان میں اہم ترین اور بہترین توصیف یہی ہو کہ اسلام کی خاتون اول حضرت خدیجۃ الکبریؓ کوآپﷺ نے اپنے لئے بہترین اور صادق ترین وزیر و مشیر اور سکون و آسودگی کا سبب قراردیا ہے۔

حضرت خدیجہؓ، خاتونِ علم و ایمان

حضرت خدیجہؓ حقیقتاً ایک عقلمند اورشریف خاتون تھیں۔ ابن جوزی رقمطراز ہیں کہ ’’خدیجہ ـ یہ پاک طینت خاتون ـ جس کی خصوصیات میں فضیلت پسندی، فکری جدت، عشق و کمال اور ترقی جیسی خصوصیات شامل ہیں ـ نوجوانی کی عمر سے ہی حجاز اور عرب کی نامور اور صاحب فضیلت خاتون سمجھی جاتی تھیں‘‘۔آپ کی مادی قوت اور مال و دولت سے زيادہ اہم آپ کی بے انتہا معنوی اور روحانی ثروت تھی۔ آپ نے اپنا رشتہ مانگنے والے اشراف قریش کی درخواست مسترد کرکے رسول اللہﷺ کو شریک حیات کے عنوان سے منتخب کیا اوریوں مادی و دنیاوی ثروت کی نعمت کو آخرت کی سعادت اور جنت کی ابدی نعمتوں سے مکمل کیا اور اپنی عقلمندی و دانائی اپنے زمانے کے لوگوں کو جتادی۔ آپ نے اس نعمت کے حصول کے لئے سب سے پہلے رسول اللہﷺ کی تصدیق کی، اسلام قبول کیا اور اسلام کی پہلی نماز رسول اللہﷺ کے ساتھ ادا کی۔

اسلام کی ترقی میں جنابِ خدیجہؓ کا کردار

حضرت خدیجہؓ نے اسلام و رسول خداﷺ کی نبوت و رسالت پر ایمان کو اپنے عمل سے ملا لیا اور اس حدیث شریف کا مصداق ٹہریں جس میں کہا گیا ہے کہ ’’ایمان قلبی اعتقاد، زبانی اقرار اوراعضاء و جوارح کے ذریعے عمل کا نام ہے‘‘۔ چنانچہ حضرت خدیجہؓ نے قرآن کے احکام پر عمل اور اسلام کے فروغ اور مسلمانوں کی امداد کے لئے اپنی دولت خرچ کرکے، رسول خداﷺ کے مقدس اہداف کی راہ میں اپنی پوری دولت کو قربان کرگئیں اور اسلام کی ترقی و پیشرفت میں ناقابل انکار کردار ادا کیا۔

سليمان الکتاني کہتا ہےکہ سیدہ خدیجہؓ نے اپنی دولت حضرت محمدﷺ کو عطا کردی مگر وہ یہ محسوس نہیں کررہی تھیں کہ اپنی دولت آپﷺ کو دے رہی ہیں بلکہ محسوس کررہی تھیں کہ اللہ تعالی جو ہدایت محمدﷺ کی محبت اور دوستی کی وجہ سے، آپ کو عطا کررہا ہے دنیا کے تمام خزانوں پر فوقیت رکھتی ہے۔

حضرت خدیجہؓ کی مالی امداد کے بدولت رسول خداﷺ تقریبا غنی اور بےنیاز ہوگئے۔ خداوند متعال آپﷺ کو اپنی عطا کردہ نعمتوں کا ذکر کرتے ہوئے ارشاد فرماتا ہےکہ

وَوَجَدَكَ عَائِلاً فَأَغْنَى۔

ترجمہ: اور [خدا نے] آپ کو تہی دست پایا تو مالدار بنایا۔

سورہ ضحیٰ (93) آیت 8۔

رسول خداﷺ فرمایا کرتے تھےکہ

ما نَفَعَنِي مالٌ قَطُّ ما نَفَعَني (أَو مِثلَ ما نَفَعَني) مالُ خَديجة۔

ترجمہ: کسی مال نے مجھے اتنا فائدہ نہیں پہنچایا جتنا فائدہ مجھے خدیجہؓ کی دولت نے پہنچایا

ام المومنین خدیجۃ الکبرےٰ کی وفات

منابع و ذرائع میں منقول ہے کہ سیدہ خدیجہؓ کا سن وفات 10 بعد از بعثت یعنی 3 سال قبل از ہجرت مدینہ ہے۔ زیادہ ترکتب مي ہے کہ وفات کے وقت آپ کی عمر 65 برس تھی۔ ابن عبدالبر، کا کہنا ہے کہ خدیجہؓ کی عمر بوقت وفات 64 سال چھ ماہ تھی۔

،بعض منابع میں ہے کہ حضرت خدیجہؓ کا سال وفات ابو طالبؓ کا سال وفات ہی ہے۔ ابن سعد کا کہنا ہے کہ حضرت خدیجہؓ ابو طالبؓ کی رحلت کے 35 دن بعد رحلت کرگئی تھیں۔ وہ اور بعض دوسرے مؤرخین نے کہا ہے کہ آپ کی وفات کی صحیح تاریخ 10 رمضان سنہ 10 بعد از بعثت ہے۔

رسول اللہﷺ نے آپ کو اپنی ردا اور پھر جنتی ردا میں کفن دیا اور مکہ کے بالائی حصے میں واقع پہاڑی کوہ حجون کے دامن میں، مقبرہ معلی’ یا جنت المعلی’ میں سپرد خاک کیا۔

اس کے بعد حضرت جبریل علیہ السلام نے آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے کہا کہ انہیں بشارت دے دیجیئے کہ اللہ نے ان کے لیے جنت میں ایک بڑا خوشنما اور پرسکون مکان تعمیر کرایا ہے۔ جس میں کوئی پتھر کا ستون نہیں ہے۔ یہی روایت امام مسلم نے حسن بن فضیل کے حوالے سے بھی بیان کی ہے۔ اسی روایت کو اسی طرح اسماعیل بن خالد کی روایت سے امام بخاری نے بھی بیان کیا ہے۔

Read 495 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Pakistanviews.org

pakistanviews.org stands as a website enlightening the masses with all information related to current affair, entertainment, sports, technology, etc. It has been brought into existence to ensure that voice of Pakistan reaches the masses. Ensuring that a true picture of Pakistan is portrayed in the right manner to the world. The website is to bring forth the real picture of Pakistan negating avenues of Terrorism and Non-State Acto