فلرٹ کرنا میری فطرت ہے، ارجن کپور

جمعرات, 28 جنوری 2016 14:07

بولی وڈ اداکار ارجن کپور کا کہنا ہے کہ وہ عموماً لوگوں کے ساتھ فلرٹ کرتے ہیں اور انھیں اس بات سے انکار نہیں، یہ ان کی فطرت ہے لیکن افواہوں کو پھیلنے سے کون روک سکتا ہے۔

کے مطابق ہندوستانی چینل 'کلرز' کے رئیلٹی شو ’خطروں کے کھلاڑی‘ کے سلسلے میں ایک پریس کانفرنس کے دوران ارجن کپور کا کہنا تھا کہ وہ لوگوں کے ساتھ فلرٹ کرتے ہیں اور یہ ان کی فطرت ہے۔

ارجن کپور بہت جلد ’خطروں کے کھلاڑی‘ کی میزبانی کرتے نظر آئیں گے۔

شو کے حوالے سے ارجن کا کہنا تھا کہ انہوں نے اس میں ایسے کئی دلچسپ کام کیے ہیں جسے دیکھ کر لوگ لطف اٹھائیں، ساتھ ہی ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے شو میں شامل شرکاء کے ساتھ بھی کافی فلرٹ کیا ہے تاہم یہ سب صرف تفریح کے لیے ہے۔

واضح رہے کہ ارجن کپور 'خطروں کے کھلاڑی' کے 7ویں سیزن کے ساتھ ٹیلی ویژن پر ڈیبیو کرنے جارہے ہیں، ان سے قبل اکشے کمار، پریانکا چوپڑا اور روہت شیٹی شو کی میزبانی کے فرائض انجام دے چکے ہیں.

شو کے حوالے سے ارجن کا کہنا تھا ’ٹیلی ویژن ہو یا تھیٹر ایک اداکار کا فرض ہے کہ وہ اپنے شائقین کو ہر طرح سے محظوظ کرے اور اس لیے میں اس شو کا حصہ بنا ہوں‘۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جو لوگ فلمیں تھیٹر میں نہیں دیکھ پاتے وہ بعد میں ان فلموں کو ٹیلی ویژن پر دیکھتے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ ٹی وی کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا۔

سینیئر اداکار امیتابھ بچن، شاہ رخ خان اور سلمان خان کا ذکر کرتے ہوئے ارجن نے کہا ’بولی وڈ کے کئی معروف اور کامیاب اداکاروں نے فلموں کے ساتھ ساتھ ٹی وی پر بھی بہترین کام کیا ہے‘۔

ارجن کپور کے شو ’خطروں کے کھلاڑی‘ میں شوبز کی 14 شخصیات شرکت کریں گی، یہ شو 30 جنوری سے نشر کیا جائے گا.

Read 844 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Pakistanviews.org

pakistanviews.org stands as a website enlightening the masses with all information related to current affair, entertainment, sports, technology, etc. It has been brought into existence to ensure that voice of Pakistan reaches the masses. Ensuring that a true picture of Pakistan is portrayed in the right manner to the world. The website is to bring forth the real picture of Pakistan negating avenues of Terrorism and Non-State Acto