سرکاری مذہب اسلام نہیں ہونا چاہیے، درخواست خارج

پیر, 28 مارچ 2016 17:23

بنگلہ دیش کی ہائی کورٹ نے پیر کے روز ایک 28 سال پرانی درخواست خارج کر دی ہے جس میں کہا گیا تھا کہ ملک کا سرکاری مذہب اسلام نہیں ہونا چاہیے۔

یہ فیصلہ تین رکنی ججوں کے پینل نے کیا۔ اس کا کہنا تھا کہ جس 15 رکنی گروپ نے 1988 میں یہ درخواست دائر کی تھی اس کے پاس ایسا کرنے کا قانونی استحقاق نہیں تھا کیوں کہ اس کا اندراج نہیں کروایا گیا تھا۔

حکومت کے وکلا کا کہنا تھا کہ عدالت کے اس فیصلے کا مطلب ہے کہ اسلام بنگلہ دیش کا سرکاری مذہب رہے گا، اور اس سے آئین کے مطابق اقلیتوں کے حقوق متاثر نہیں ہوں گے۔

بنگلہ دیش میں اسلام کو 1988 میں اس وقت کے فوجی آمر حسین محمد ارشاد نے سرکاری مذہب قرار دیا تھا۔ اس کا مقصد ایک ایسے وقت میں سیاسی حمایت حاصل کرنا تھا جب ملک کی بڑی سیاسی جماعتیں ان کے خلاف تحریک چلا رہی تھیں۔

ملک کی حالیہ وزیرِ اعظم شیخ حسینہ نے 2011 میں ایک آئینی ترمیم کے ذریعے سیکیولرزم کو بطور سیاسی معیار متعارف کروایا تھا، تاہم اسلام بدستور سرکاری مذہب رہا۔

ایک مذہبی تنظیم ’حفاظتِ اسلام‘ نے اس فیصلے کو سراہا ہے۔ اس کے رہنما فضل الکریم نے اس موقعے پر کہا: ’ہم اس درخواست کو مسترد کرنے پر ملک بھر کی طرف سے عدالت کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔ ہمارے معاشرے میں مسلمانوں اور غیرمسلموں کے درمیان ایک عرصے سے اچھے تعلقات چلے آ رہے ہیں۔‘

Read 139 times

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

Pakistanviews.org

pakistanviews.org stands as a website enlightening the masses with all information related to current affair, entertainment, sports, technology, etc. It has been brought into existence to ensure that voice of Pakistan reaches the masses. Ensuring that a true picture of Pakistan is portrayed in the right manner to the world. The website is to bring forth the real picture of Pakistan negating avenues of Terrorism and Non-State Acto